کورونا وائرس۔ خیبر پختونخوا میں بازار ایک ہفتہ مزید بند رہیں گے

صوبائی حکومت نے کرونا وائرس پر قابو پانے اور اسے مزید پھیلنے سے روکنے کی غرض سے تمام مارکیٹیں اور بازار 29 مارچ تک بند رکھنے کا فیصلہ کیا ہے

صوبائی حکومت کی جانب سے جاری ہونے والے اعلامیے میں مارکیٹیں بند کرنے کے فیصلے میں مزید توسیع کی گئی ہے اور اب یہ پابندی سات دن تک جاری رہے گی۔

یہ خبر بھی پڑھیں کورونا وائرس۔ پاکستان لاک ڈاؤن کی جانب گامزن

اعلامیے کے مطابق نہ صرف بازار بند رہیں گے بلکہ تمام ہوٹل اور ریسٹورنٹس بھی نہ صرف بند رہیں گے بلکہ خوراک پارسل میں بیچنے اور ہوم ڈیلیوری پر بھی پابندی ہوگی اور تمام ہوٹلوں کے کیچن بھی بند رہیں گے۔

اعلامیے کے مطابق میڈیکل سٹور اور فامیسی سمیت کریانہ سٹور کھلے رہیں گے۔ اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ کرونا وائرس سے بچنے کا واحد حل یہ ہے کہ لوگ اپنے گھروں میں رہیں اور ہاتھ ملانے اور سماجی میل جول سے گریز کریں

یاد رہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد 8 سو سے تجاوز کر چکی ہے اور اب تک چھ افراد اس وائرس سے موت کا شکار ہو چکے ہیں

اگر چہ صوبہ خیبر پختونخوا میں کرونا وائرس کا شکار مریضوں کی تعداد سب سے کم یعنی صرف 31 ہے لیکن حکومت اس وائرس کے مزید پھیلاؤ کو روکنے کے لیے سنجیدہ اقدامات اٹھا رہی ہے۔

صوبائی حکومت پہلے ہی ٹرانسپورٹ اڈوں اور ٹیکسی سٹینڈز کو بند کرنے کے احکامات جاری کر چکی ہے اور آج صبح 9 بجے سے بین الاضلاعی پبلک ٹرانسپورٹ پر بھی پابندی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق آج ملک بھر سے 28 کیسز رپورٹ ہوئے جن میں سے پنجاب میں 24، اسلام آباد میں 4 افراد میں مہلک وائرس کی تصدیق  ہوئی۔

نئے کیسز کی تصدیق کے بعد ملک میں متاثرہ افراد کی تعداد 824 تک جا پہنچی ہے جبکہ مہلک وائرس سے اب تک 6 افراد صحتیاب بھی ہوئے ہیں جن میں سے 4 کا تعلق سندھ اور 2 کا اسلام آباد سے ہے۔

بلوچستان میں کورونا وائرس سے پہلی ہلاکت کے بعد ملک میں انتقال کرجانے والوں کی مجموعی تعداد 6 ہوگئی ہے۔
اس سے قبل خیبرپختونخوا میں 3، سندھ اور گلگت بلتستان میں ایک، ایک شخص جاں بحق ہوا تھا۔

ٹیگز

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
error: Content is protected !!
Close