کوہاٹ یونیورسٹی کے طلباء اپنے حق کے لیے سڑکوں پر آگئے

کوہاٹ

کوہاٹ یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے طلبہ نے آن لائن امتحان کے بجائے تحریری امتحان دیئے جانے کے یونیورسٹی انتظامیہ کے حکم نامے کو مسترد کرتے ہوئے احتجاجی مظاہرے شروع کیے ہیں۔

طلباء یونیورسٹی گیٹ کے باہر جمع ہو گئے اور یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف نعرے بازی کرنے لگے۔

طلباء نے بے باک آواز کو بتایا کہ کورونا وائرس کی وجہ سے انہیں آن لائن امتحان کے لیے تیار رہنے کا کہا گیا تھا لیکن یونیورسٹی کھلتے ہی انہیں جسمانی طور پر یونیورسٹی آنے اور انہیں تحریری طور پر امتحان دینے کا حکم سنا دیا گیا۔

طلباء نے کہا کہ وہ اپنا تعلیمی سال ضائع کرنے کے لئے ہرگز تیار نہیں اور کسی بھی صورت یونیورسٹی انتظامیہ کا مذکورہ فیصلہ ماننے کو تیار نہیں

ایک طالبعلم نے بتایا کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے اپنے لیکچر اپلوڈ کر دیئے لیکن قبائلی علاقوں سے تعلق رکھنے والے طلباء ان لیکچرز تک رسائی حاصل نہ کر سکے اور جوں ہی یونیورسٹی آئے انہیں تحریری امتحان کا مژدہ سنا دیا۔

دوسری جانب یونیورسٹی کے ذیشان بنگش نے بتایا کہ طلباء کو وقت دیا گیا ہے کہ امتحان کے لیے تیاری کر لیں جبکہ دور دراز علاقوں سے تعلق رکھنے والے طلباء کے لیے یونیورسٹی نے اپنے دفاتر قائم کیے ہوئے ہیں جہاں سے طلباء لیکچر حاصل کر سکتے ہیں۔

کے بارے میں Web desk

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: Content is protected !!