کوہاٹ فائرنگ واقعہ، پولیس کا بیان سامنے آگیا ہے

کوہاٹ:

کوہاٹ میں دو افراد کو قتل کرنے اور ملزمان کی عدم گرفتاری کے خلاف مارے جانے والے افراد کے لواحقین نے لاشیں سڑک پر رکھ کر احتجاجی مظاہرہ کیا۔

مظاہرین ملزمان کئی گرفتاری اور عوام کو تحفظ دینے کا مطالبہ کر رہے تھے۔

دوسری جانب فائرنگ کے واقعے کے بعد بازار میں بھگدڑ مچ گئی اور دکانداروں نے اپنی دکانیں بند کر دیں۔

اس دوران کمیٹی چوک کے قریب بھی بعض نامعلوم افراد نے فائرنگ کردی جس کے خلاف اسی چوک پر دکانداروں نے احتجاج کیا اور فائرنگ کرنے والے افراد کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔

یہ بھی پڑھیں:کوہاٹ میں دو افراد قتل، شہر کے سارے بازار بند

مظاہروں کے بعد پولیس نے شہر بھر کی سیکورٹی سخت کر دی اور پولیس کی اضافی نفری تعینات کر دی۔

دریں اثناء ڈی پی او کوہاٹ جاوید اقبال نے بے باک آواز کو بتایا کہ دو افراد کے قتل کا مقدمہ نامعلوم افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا ہے جس میں دہشت گردی کے دفعات شامل کیے گئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:کوہاٹ فائرنگ واقعہ، ڈویژن بھر میں سیکورٹی سخت، ملزمان کو پکڑ لیں گے، ڈی آئی جی

انہوں نے کہا کہ چند روز قبل کے ڈی اے میں قتل کیے جانے والے قیصر عباس کے قتل اور حالیہ واقعے میں صرف اتنی مماثلت پائی جاتی ہے کہ مارے جانے والے افراد کا تعلق ایک ہی علاقے ابراہیم زئی سے ہے جو کہ ضلع ہنگو کی حدود میں پایا جاتا ہے۔

ٹیگز

متعلقہ پوسٹس

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
error: Content is protected !!
Close