انسپکٹر خان اللہ قتل کیس،اہم ملزم جیل احاطے سے فرار

تھانہ لاچی کے ایس ایچ او سمیت چار اہلکاروں کے قتل میں نامزد ملزم کو شارٹ کٹ رہائی مل گئی، پولیس کو چکمہ دے گیا، پولیس سرگرداں ہوکر رہ گئی
ملزم محمد عابد سکنہ سماری پایاں کو دیگر 25ملزمان کے ہمراہ کوہاٹ کچہری میں پیشی کے بعد جیل لایا گیا، جب پولیس گاڑی سے ملزمان کو اتار رہی تھی تو اس دوران ملزم ہتھکڑی نکال کر رفو چکر ہو گیا، پولیس ملزم کو ڈھونڈتے ڈھونڈتے تھک گئی لیکن ملزم کا سراغ نہ مل سکا، ذرائع
فرار ہونے والا ملزم پولیس کو قتل اور اقدام قتل سمیت سات مقدمات میں مطلوب ہے، تھانہ جرما میں غفلت کے مرتکب اٹھارہ پولیس اہلکاروں کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا، سب نے ضمانتیں کروالیں، ملزم کو جلد گرفتار کر لیں گے، ڈی پی او سہیل خالد کی بے باک کیساتھ گفتگو

کوہاٹ(ممتاز بنگش سے)انسپکٹر خان اللہ اور ساتھیوں کی قتل میں نامزد ملزم پولیس کو چکمہ دے کر جیل احاطے سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گیاتھانہ جرما میں اٹھارہ پولیس اہلکاروں کیخلاف مقدمہ درج کر لیا گیا پولیس ڈی پی او نے واقعے کی تصدیق کر دی ذرائع کے مطابق ملزم محمد عابدکو مزید 25ملزمان کے ہمراہ مختلف عدالتوں میں پیشی کے بعد جیل لایا گیا پولیس تھانہ جرما میں درج ایف آئی آر کے متن کے مطابق جب ان ملزمان کو جیل احاطے میں اتارا جا رہا تھا تو اس دوران ملزم عابد ہتھکڑیا ںاتار کر فرار ہوگیا ملزم کے خلاف تھانہ لاچی میں 302/324/353/427/148/149/اور 15AAکے تحت مقدمات درج تھے۔ پولیس نے تھانہ جر ما میںاٹھارہ پولیس اہلکاروں کو غفلت کا مرتکب قرار دیتے ہوئے ان کے خلاف زیردفعہ 323/224مقدمہ درج کر لیا گیا ہے جن میں پی اے ایس آئی طارق وحیدسمیت صراط علی، محمد اقبال، عالمزیب، رضوان، سلطان، ابرار، عمر فاروق، اکرم، ریاض الدین، علی فیصل، صابر حسین، امراز علی اور دیگر شامل ہیںاس حوالے سے ڈی پی او سہیل خالد نے واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ پولیس اہلکاروں کوگرفتار کر لیا گیا ہے اور ملزم کو جلد گرفتار کر لیں گے، تاہم ذرائع نے بے باک آواز کو بتایا ہے کہ تمام پولیس اہلکاروں نے ضمانتیں کروالی ہیںیاد رہے کہ مئی 2017ءمیں تھانہ لاچی کے ایس ایچ او انسپکٹر خان اللہ، ایڈیشنل ایس ایچ او طاہر محمود،سپاہی عابد اور سپاہی تنویر کو گھات لگائے ملزمان نے اس وقت فائرنگ کرکے قتل کر دیا تھا جب وہ کمال خیل میں ایک کارروائی کے بعد واپس آرہے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں